touheedosunnat

Just another WordPress.com site

باب : وہ شخص جو مجلس کے آخر میں بیٹھ جائے اور وہ شخص جو درمیان میں جہاں جگہ دیکھے بیٹھ جائے (بشرطیکہ دوسروں کو تکلیف نہ ہو)

پر مئی 17, 2013
صحیح بخاری
کتاب العلم

 
حدیث نمبر: 66
 
 
حدثنا إسماعيل،‏‏‏‏ قال حدثني مالك،‏‏‏‏ عن إسحاق بن عبد الله بن أبي طلحة،‏‏‏‏ أن أبا مرة،‏‏‏‏ مولى عقيل بن أبي طالب أخبره عن أبي واقد الليثي،‏‏‏‏ أن رسول الله صلى الله عليه وسلم بينما هو جالس في المسجد والناس معه،‏‏‏‏ إذ أقبل ثلاثة نفر،‏‏‏‏ فأقبل اثنان إلى رسول الله صلى الله عليه وسلم وذهب واحد،‏‏‏‏ قال فوقفا على رسول الله صلى الله عليه وسلم فأما أحدهما فرأى فرجة في الحلقة فجلس فيها،‏‏‏‏ وأما الآخر فجلس خلفهم،‏‏‏‏ وأما الثالث فأدبر ذاهبا،‏‏‏‏ فلما فرغ رسول الله صلى الله عليه وسلم قال ‏”‏ ألا أخبركم عن النفر الثلاثة أما أحدهم فأوى إلى الله،‏‏‏‏ فآواه الله،‏‏‏‏ وأما الآخر فاستحيا،‏‏‏‏ فاستحيا الله منه،‏‏‏‏ وأما الآخر فأعرض،‏‏‏‏ فأعرض الله عنه ‏”‏‏.‏

‏‏

 
ہم سے اسماعیل نے بیان کیا، کہا ان سے مالک نے اسحاق بن عبداللہ بن ابی طلحہ کے واسطے سے ذکر کیا، بیشک ابومرہ مولیٰ عقیل بن ابی طالب نے انہیں ابوواقد اللیثی سے خبر دی کہ (ایک مرتبہ) رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم مسجد میں تشریف فرما تھے اور لوگ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے اردگرد بیٹھے ہوئے تھے کہ تین آدمی وہاں آئے (ان میں سے) دو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے سامنے پہنچ گئے اور ایک واپس چلا گیا۔ (راوی کہتے ہیں کہ) پھر وہ دونوں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے سامنے کھڑے ہو گئے۔ اس کے بعد ان میں سے ایک نے (جب) مجلس میں (ایک جگہ کچھ) گنجائش دیکھی، تو وہاں بیٹھ گیا اور دوسرا اہل مجلس کے پیچھے بیٹھ گیا اور تیسرا جو تھا وہ لوٹ گیا۔ تو جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم (اپنی گفتگو سے) فارغ ہوئے (تو صحابہ رضی اللہ عنہم سے) فرمایا کہ کیا میں تمہیں تین آدمیوں کے بارے میں نہ بتاؤں؟ تو (سنو) ان میں سے ایک نے اللہ سے پناہ چاہی اللہ نے اسے پناہ دی اور دوسرے کو شرم آئی تو اللہ بھی اس سے شرمایا (کہ اسے بھی بخش دیا) اور تیسرے شخص نے منہ موڑا، تو اللہ نے (بھی) اس سے منہ موڑ لیا۔
 
  • Narrated Abu Waqid Al-Laithi: While Allah’s Apostle was sitting in the mosque with some people, three men came. Two of them came in front of Allah’s Apostle and the third one went away. The two persons kept on standing before Allah’s Apostle for a while and then one of them found a place in the circle and sat there while the other sat behind the gathering, and the third one went away. When Allah’s Apostle finished his preaching, he said, “Shall I tell you about these three persons? One of them betook himself to Allah, so Allah took him into His grace and mercy and accommodated him, the second felt shy from Allah, so Allah sheltered Him in His mercy (and did not punish him), while the third turned his face from Allah and went away, so Allah turned His face from him likewise. “
   

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: